دو دہائیوں بعد بھی ۔۔۔۔۔

Published on (December 27, 2017)

دستک
روبینہ فیصل
qrubina25@yahoo.com
دو دہائیوں بعد بھی ۔۔۔۔۔
ایک خبر نظر سے گزری :
باچا خان یو نیورسٹی چار سدہ میں مرد سٹوڈنٹس کو خواتین سٹوڈنٹس سے دور رہنے کا نوٹیفیکشن ۔۔۔
یہ خبر پڑھتے ہی مجھے اپنا بی کام والا زمانہ یاد آگیا۔۔ یہ تو پشاور یو نیورسٹی کی بات ہے۔ہم تو ، پاکستان کے سب سے بڑے کامرس کالج، ہیلی کالج لاہورکی طالبعلم تھیں۔ ضیا الحق کی باقیات دنداناتی پھر رہی تھیں، جن کا ایمان تھا کہ ،جان جائے تو جائے مگر آن نہ جائے اور پاکستان میںآن کے آنے جانے کی ساری زمہ داری عورتوں پر ہوتی ہے۔
ڈیڑھ دو ہزار لڑکے ، مگرہیلی کالج کی عزت کا سارابوجھ نازک سے50 لڑکیوں کے سیکشن پر تھا ۔ لڑکے آزادی سے گراونڈز میں کر کٹ کھیلتے اورلڑکیوں کو اپنی سہولت کے حساب سے تاڑتے ۔اس کے برعکس لڑکیوں کو حکم تھا کہ جب بھی وہ اپنی زنانہ کلاس سے باہر نکلیں،اپنی نظر یں اور آوازیں نیچی رکھیں ، کینٹین کا بڑا حصہ بھی ان لڑکوں کی ملکیت تھا ، اور لڑکیوں کے حصے کی کینٹین، ایک چھوٹا سا کھڈا تھی جس میں گھس کر انہیں وازیں بھی نیچی رکھنے کا حکم تھا ۔مگرجب بھی کینٹین میں ہمارا گروپ جاتا ، کینٹین کے بابا جی سر نکال کر ہمیں تنبیہ کر تے ۔ کچھ وہ عمر لاابالی ہو تی ہے کچھ ہمارے خمیر میں بے پروائی اور شرارت ضرورت سے زیادہ تھی ۔اس لئے پرواہ نہ کر تے ۔
ایک اور دکھ جو ہماری جان کو لاحق رہتا تھا ۔ کینٹین کے بعدلائبیریری میں بھی ہمارا حصہ مختصر سا تھا ۔ جہاں کتابوں کی شیلفیں نہیں تھیں بس بیٹھنے کے لئے کرسیاں اور میز کے درمیان میں ایک چھوٹی سی تکونی پلیٹ پڑی ہو تی جس پر SILENCEلکھا ہو تا تھا ، ہم جاتے ہی اس پلیٹ کو اوندھے منہ رکھ کر ہنسنا ، بولنا شروع کر دیتی تھیں ۔ اور جب لائبریرین غصے کی حالت میں اندر آتا اور ہمیں دیکھے بغیر تکونی پلیٹ کی طرف انگلی کا اشارہ کر تا اور پوچھتا: کیا “silence”لکھا نظر نہیں آتا ۔۔ ہم بڑے اعتماد سے کہتیں “نہیں “۔۔وہ ہمیں دیکھانے کے لئے جب ادھر دیکھتا تو اوندھے پڑےSILENCE کو دیکھ کر دانت کچکا کر رہ جا تا ، مگرپہلے سے بھی زیادہ بارعب آواز نکال کر کہتا :
“کیا تم لوگ چاہتی ہو کہ جمعیت تک تمھاری شکایت چلی جائے ۔۔۔”ْ؟ اس نام سے کچھ کمزور دل لڑکیاں سہم جاتیں اور کچھ ہمارے جیسی لاپرواہ اطمینان سے کہتیں ۔۔ “یہ بھی ہو جائے ۔۔۔”۔
کچھ مذید قصے !!
تین چار لڑکیوں کے ایک گروپ نے کالج کی لائبیری کے گھٹے ہو ئے ماحول سے گھبرا کر ،پنجاب یو نیورسٹی نیو کیمپیس کی مین لائبیری میں کالج ٹائم کے بعد اپنے سے سنئیر ایک لڑکے سے ٹیوشن پڑھنے کی ٹھانی ۔وہ 18,19سال کی اس کچی عمر میں سمجھیں کہ شائد نیو کیمپس میں جہاں ہم سے زرا بڑی عمر کے لوگ پڑھتے ہیں ، ماحول ایسا سخت نہ ہو گا ۔ مگر پکڑ وہاں بھی ہو گئی اور پو ری یو نیورسٹی کی عزت کے رکھوالے لیڈر ان کے سروں پر پہنچ گئے اور ان کی بری طرح سرز نش ہوئی ۔ یہ کہانی مجھے اگلے دن صبح کالج آتے ہی پتہ چلی ۔ جو لڑکیاں وہاں مو جود تھیں ، ان میں سے کچھ اس بلا وجہ بے عزتی پر ناراض تھیں اور کچھ سہمی ہو ئیں ۔ بہرحال فیصلہ ہوا خوف ایک طرف ، احتجاج تو بنتا ہے ۔ کہیں سے چاک لیا اور کچھ جذباتی نعرے جیسے :
“ہم نہیں مانتے ظلم کے ضابطے ۔۔”۔گرتی ہو ئی دیوار کو ایک دھکہ اور دو ۔۔ جن کا کوئی سر بنتا تھا نہ پیر ، سب پرنسپل کے آفس کی دیوار پر لکھ دئے ، ایسے کاموں میں ، میرے اندر بجلی سے بھر جا تی تھی ، لہذا ، لائبیری گروپ کا پارٹ نہ ہو تے ہو ئے بھی ، میں ہی اس ساری وال چاکنگ میں آگے آگے رہی ۔۔۔
چپڑاسی نے ہمیں منع کر نے کی کوشش کی ، اس کا نام سہیل تھا ، شائد ۔۔ ہم باز نہ آئیں ۔ احتجاج آفس کی دیوار پر لکھ کر چلی گئیں یہ سوچ کر کہ پر نسپل کم از کم پڑھیں گے تو سہی ۔ مگر یہ کیا تھوڑی دیر بعدوہاں سے گذر ہوا تو دیکھا ، سہیل صاحب سب نعروں کے اوپر گیلا کپڑا پھیر چکے ہیں ۔ بہت غصہ آیا ، کم از کم پر نسپل کے آنے تک تو لکھا رہنے دیتا ۔ اس سے لڑنے کے لئے اسے ڈھونڈا ، وہ پر نسپل کے دفتر کے اندر ہی پا یا گیا ،ایک خیال چھماکے سے آیا کہ کیا اس سے بحث کر یں کیوں نا اسے کمر ے میں ہی بند کر کے باہر سے کنڈی لگا دی جائے ۔ اس کے پیچھے سوچ یہ تھی کہ پر نسپل ہی آکر اسے کھولیں گے مگر اس سے پہلے دیوار پر لکھے ہمارے احتجاجی نعرے بھی پڑھ لیں گے ۔ نعرے پہلے سے بھی زیادہ جوش و خروش سے لکھے گئے۔یہ سب کاروائی کر کے ہم سب سکون سے ، جیسے دل کا کوئی بہت بڑا بوجھ ہلکا ہو گیا ہو ، جیسے ہم نے نا انصافی اور زیادتی کا بدلہ لے لیا ہو ، جا کر کلاس پڑھنے لگ گئیں ۔
اگلے دن وہی سہیل صاحب ، جوش اور غصے کے ملے جلے جذبات کے ساتھ ہمارے سروں پر موجود تھے ،ٹیچر کو کہا کہ یہ لسٹ ہے ان لڑکیوں کی جنہیں پر نسپل نے بلا یا ہے ،لسٹ میں تقریبا آدھی کلاس کے نام تھے ۔ سب مجرموں کو دس منٹ کے اندر پر نسپل کے آفس حاضر ہو نے کا حکم ملا ۔ ہم سب باغی قرار دی جا چکی تھیں ۔ ہم سب ہاتھ باندھے پر نسپل کے سامنے جا کھڑی ہوئیں ۔۔
چارج شیٹ پڑھی جانے لگی اور ہم سب کے سر جھکتے گئے
پہلا جر م:چھڑی کے ساتھ کالج گراؤنڈز میں لگے درختوں سے امرود اتارنے کا تھا ۔
دوسرا جر م:کالج ختم ہو نے کے بعد فیلڈز میں پیٹھو گول گرم کھیلنے کا تھا ۔
تیسرا جرم :لڑکوں کو آتے جاتے انتہائی دیدہ دلیری سے فقرے مارے جانے کا تھا۔
چوتھا جرم :کچھ لڑکیوں کا کالج لائبیری کے مردانہ حصے میں کھڑے ہو کر لڑکوں سے باتیں کرنے کا تھا ۔
اور سب سے بڑا جرم لائیبریری میں لڑکے لڑکیاں اکھٹے پڑھتے رنگے ہاتھوں پکڑ ے جانے کا تھا اور اس پر شرمندہ ہو نے کی بجائے انہوں نے بھر پور ڈھٹائی کا مظاہرہ کیا تھا۔
جرم :پر نسپل کے چپڑاسی کو آفس میں بند کیا گیا ۔
جرم :پرنسپل آفس کے باہر وال چاکنگ کی گئی ۔۔
ہر جر م کے اعلان کے بعد ہمارے سر مذید جھک جاتے ۔مگر ہم ہر جرم سے صاف مکر گئیں ۔۔ گواہی کے لئے سہیل کو اور صفائی والے بابا جی کو بلا یا گیا ۔ سوائے لائبیری میں کھڑے ہو کر لڑکوں سے باتیں کرنے کے ، ہر دوسری حرکت امرود توڑنے سے لے کر ، سہیل کو آفس میں بند کر نے تک ، گو اہوں کی انگلی میری طرف اٹھی ۔”روبی نے کیا “۔ پر نسپل دل سے لبرل تھے ، مذہبی جماعت کے خوف سے مجبورہو کر ہمیں لائن حاضر کر چکے تھے مگر ہمارے ساتھ نرمی کا رویہ تھا۔۔۔ لسٹ دیکھ کر بولے روبی نے کافی کچھ کیا ہے مگر اس کا نام لسٹ میں نہیں ہے اور جن کے نام لسٹ میں تھے ، وہ بچاری کسی انتہائی چھوٹے موٹے جر م میں ملوث تھیں ۔میرے جرائم بہت سنگین تھے مگر روبی نام مشہور تھا ، روبینہ نام کو کوئی جانتا نہیں تھا شائداس وجہ سے بچ گئی۔ یا جمعیت کے کسی بھائی کو اس بہن پر ترس آگیا ہو ۔۔ اور یہ وہ بھائی تھے جو اچھی سی بہنیں دیکھ کر شادی کے لئے پر پوز بھی کر دیا کرتے تھے۔
پر نسپل نے سب کو مجموعی طور پر وارننگ دی کی آئندہ اس قسم کی حرکتیں ہو ئیں تو مجھے مجبورا آپ کے والدین کو بلا نا پڑے گا ۔ اس دھمکی نے تو معصوم لڑکیوں کی جان ہی نکال دی ۔۔ایک کی دل دوز دھاڑیں مجھے آج بھی یاد ہیں ۔۔
وہ نواز شریف کی طرح یہی پو چھتی جا رہی تھی میں نے کیا کیا ہے ۔۔ مجھے کیوں بلا یا ۔۔۔۔؟کیو نکہ وہ بچاری ان سب معاملوں سے بہت دور تھی ، اس کا قصور صرف اتنا تھا کہ جتنا اونچی وہ تب رو رہی تھی ، اتنا ہی اونچی وہ ہنستی تھی ۔۔۔
آج کینڈا میں بیٹھے اپنی بیٹی کو اعتماد سے تعلیم لیتے ، لڑکوں سے بات چیت کرتے ، آدھی رات کو بس لے کر سکون سے گھر آتے دیکھتی ہوں تو سوچتی ہوں کہ کیا میری بیٹی اس تعلیمی ماحول کا تصور بھی کر سکتی ہے جس میں سے ہم گذر کر آئی ہیں ؟
مگر افسوس دو دہائیاں گزر جانے کے بعد بھی پشاوریو نیورسٹی کی لڑکیوں کی قسمت وہی رہی جسے ہم تھے تو ہنس کے سہہ گئے ، وہ کیا کر یں گی؟

Leave a Reply

avatar
  Subscribe  
Notify of